ان کی چوکھٹ پہ جبیں جس نے جھکائی ہوگی
اس کی قسمت پہ فداساری خدائی ہوگی
سانس لیتا ہوں تو آتی ہے مہک طیبہ کی
یہ ہوا کوچہ سرکار سے آئی ہوگی
دل تڑپ جائےگا سینے میں ترا اے حاجی
تیری جس وقت مدینے سے جدائی ہوگی
چاند قربان ہوا ان کے اک اشارے پر
ہوگا کیا وقت کہ جب انگلی اٹھائی ہوگی
اے ہوا خاک درآقاپر سجدے کرنا
تیری جس وقت رسائی مدینے میں ہوگی
تجھ سے کچھ بھی نکیروں نے “منصور”پوچھا
قبر میں نعتِ نبی تونے سنائی ہوگی