Owais Razvi Qadri Siddiqui
Sufi Singer

شورِ مہِ نو سن کر تجھ تک میں دواں آیا​

2,828
شورِ مہِ نو سن کر تجھ تک میں دواں آیا​
ساقی میں ترے صدقے مے دے رمضاں آیا​
اس گل کے سوا ہر پھول با گوش گراں آیا​
دیکھے ہی گی اے بلبل جب وقتِ فغاں آیا​
جب بامِ تجلی پر وہ نیّرِ جاں آیا​
سرتھا جو گرا جھک کر دل تھا جو تپاں آیا​
جنت کو حرم سمجھا آتے تو یہاں آیا​
اب تک کے ہر اک کا منہ کہتا ہوں کہاں آیا​
طیبہ کے سوا سب باغ پامالِ فنا ہونگے​
دیکھو گے چمن والو ! جب عہدِ خزاں آیا​
سر اور وہ سنگِ در آنکھ اور وہ بزمِ نور​
ظالم کو وطن کا دھیان آیا تو کہاں آیا​
کچھ نعت کے طبقے کا عالم ہی نرالا ہے​
سکتہ میں پڑی ہے عقل چکر میں گماں آیا​
جلتی تھی زمیں کیسی، تھی دھوپ کڑی کیسی​
لو وہ قدِ بے سایہ اب سایہ کناں آیا​
طیبہ سے ہم آتے ہیں کہئے تو جناں والو​
کیا دیکھ کے جیتا ہے جو واں سے یہاں آیا​
لے طوقِ الم سے اب آزاد ہو اے قمری​
چٹھی لئے بخشش کی وہ سروِ رواں آیا​
نامہ سے رضا کے اب مٹ جاؤ برے کامو​
دیکھو مرے پلّے پر وہ اچھے میاں آیا​
بد کار رضا خوش ہو بد کام بھلے ہونگے​
وہ اچھے میاں پیارا اچھوں کا میاں آیا​
الشاہ حضرت امام احمد رضا خان فاضلِ بریلوی رحمۃ اللہ علیہ​
Comments
Loading...