Owais Razvi Qadri Siddiqui
Sufi Singer

میرے آقا آؤ کہ مُدّت ہوئی ہے

988

میرے   آقا   آؤ  کہ  مُدّت  ہوئی   ہے

تیری راہ میں آکھیاّں بچھاتے بچھاتے

تیری  حسرتوں میں تیری چاہتوں میں

بڑے  دن  ہوئے گھر سجاتے سجاتے

میرا یہ  ایماں  میرا  یہ  یقیں   ہے

میرے مُصطفٰی سا نہ کوئ حسیں ہے

کہ رُخ  اُنکا دیکھا ہے جب سے   قمر  نے

نکلتا   ہے  مُنہ کو  چھپاتے چھپاتے

قیامت کا  منظر بڑا  پُر  خطر   ہے

مگر  جو  مُصطفٰی کا جو  دیوانہ ہو گا

وہ پُل  سے  گُزر جائے گا  وجد  کرتے

نعرہ        نبی   کا    لگاتے    لگاتے

میرے لب پہ مولا  نہ  کوئ صدا  ہے

فقط  مجھ  نکمّے کی  یہ  ہی دعا ہے

میری  سانس  نکلے  درِ    مُصطفٰی  پہ

غمِ  دل  نبی  کو   سُناتے     سُناتے 

یہ  مانا  کہ   اک    دن    قضا    ہے

مگر  دوستو   تُم  سے  یہ التجا  ہے

شہرِ  مُحمَّد  کی  ہر  اک  گلی  سے

جنازہ     اُٹھانا    گھماتے  گھماتے

صلَّی اللہُ علَیه وَآله وَ صحبه وَبارك وَسلَّم ♥

Comments
Loading...