Owais Razvi Qadri Siddiqui
Sufi Singer

استغفار و توبہ سے مرادیں پوری کریں 

327

سُوۡرَةُ نُوح

فَقُلْتُ اسْتَغْفِرُوا رَبَّكُمْ إِنَّهُ كَانَ غَفَّارًا (١٠)

يُرْسِلِ السَّمَاءَ عَلَيْكُمْ مِدْرَارًا (١١)

وَيُمْدِدْكُمْ بِأَمْوَالٍ وَبَنِينَ وَيَجْعَلْ لَكُمْ جَنَّاتٍ وَيَجْعَلْ لَكُمْ أَنْهَارًا (١٢)

 

حضرت عمررضی اللہ تعالی عنھہ ایک دفعہ نماز استسقا کےلیے منبر پر چڑھے تو صرف آیات استغفار جن میں یہ آیتیں بھی تھی پڑھکر منبر سے اتر آئے۔ اور فرمایا “میں نے بارش کو بارش کے ان راستوں سے طلب کیا ھے جو آسمانوں میں ھے جن سے بارش زمین پر اتر آتی ھے۔

(ابن کثیر) حضرت حسن بصری سے متعلق مروی ھے ان سے آکر کسی نے قحط سالی کی شکایت کی تو انہوں نے اسے استغفار کی تلقین کی۔ کسی شخص نے فقر وفاقہ کی شکایت کی تو اسے بھی استغفار کرنے کو کہا اور ایک شخص نے باغ کے خشک ھونے کا شکوہ کیا تو اسے بھی یہی نسخہ بتایا اور کسی شخص نے کہا میرے اولاد نہیں تو ان سے بھی فرمایا استغفار کریں کسی نے ان سے پوچھاکہ آپ نے استغفار ھی کی کیوں تلقین کی تو آپ نے یہی آیت تلاوت کرکے فرمایا۔

کہ میں نے اپنے پاس سے بات نہیں کی بلکہ یہ وہ نسخہ ھے جو اللہ نے ان سب باتوں کے لیے بتلایا ھے۔

Comments
Loading...